تحقیق

گھرانے میں غصہ اور مارپیٹ

تازہ تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ ہمیں ناروے میں بچوں کے ساتھ غصے اور مارپیٹ کی روک تھام کو عوامی صحت کے نقطۂ نظر سے دیکھنا چاہیئے۔ Mossige کا تحقیقی مطالعہ(2016) واضح کرتا ہے کہ تحقیق میں شامل نوعمر افراد میں سے 6٪ افراد اپنے والدین کے تشدّد (مکّا مارا، پٹائی کی وغیرہ) کی وجہ سے ڈاکٹر کے پاس علاج کیلئے گئے تھے۔ ماں اور باپ بچوں کے ساتھ سنگین تشدّد میں برابر کے شریک تھے۔ Mossige نے مزید واضح کیا کہ 21٪ نوعمر افراد بتاتے ہیں کہ انکے ساتھ قدرے معمولی مارپیٹ ہوئی، وہ والدین کے غصے سے خوفزدہ ہوۓ (تھپڑ مارا، زور سے جھنجھوڑا، چٹکی کاٹی وغیرہ)۔ ماں کی طرف سے 14٪ اور باپ کی طرف سے 13٪۔ تحقیقی مطالعے سے پتہ چلتا ہے کہ ماں اور باپ معمولی مارپیٹ اور سنگین تشدد دونوں میں برابر کے شریک تھے۔ لہذا غصے پر قابو کا موضوع ماؤں سے بھی اتنا ہی تعلق رکھتا ہے جتنا کہ باپوں سے۔

ACE تحقیق (Filetti 2009) میں 15 سال تک 17000 بچوں کا مشاہدہ کیا گیا اور یہ معلوم ہوا کہ طویل عرصہ والدین کے غصے اور مارپیٹ کے خوف میں زںدگی گزارنا وہ سب سے نقصان دہ اثر ہے جو بچوں کو پیش آ سکتا ہے۔ مسلسل بچاؤ کیلئے تیار رہنے سے مدافعتی نظام کمزور ہو جاتا ہے اور کئی طرح کی جسمانی اور نفسیاتی بیماریوں کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔

نارویجن میڈیکل ایسوسی ایشن(DNL 2010) نےACE تحقیق سمیت دیگر مواد کی بنیاد پر ایک رپورٹ تیار کی ہے۔ نارویجن میڈیکل ایسوسی ایشن نے لکھا ہے کہ "ACE تحقیق کے نتائج سے پتہ چلتا ہے کہ بچپن میں منفی تجربات کا اثر شدید ہوتا ہے، وقت کے ساتھ ساتھ بڑھتا ہے اور بعد میں صحت کے مسائل اور جلد وفات کیلئے فیصلہ کن اہمیت رکھتا ہے۔ بالغ عمر میں کئی عام بیماریوں کے بارے میں یہ اخذ کرنا پڑتا ہے کہ یہ بچپن کے حالات کا نتیجہ ہیں۔ لہذا روک تھام اور علاج کے ضروری اقدامات شروع کرنا لازمی ہے”۔

Kirkengen نے اپنے ڈاکٹریٹ کے مقالے "بدسلوکی کا شکار بچے بیمار بالغ کیوں بنتے ہیں” میں حوالہ دیا ہے کہ غصے کی شکل میں معمولی بدسلوکی بھی بچوں کو نقصان پہنچا سکتی ہے۔ سب سے زیادہ فرق اس سے پڑتا ہے کہ غصہ اچانک، بغیر پیشگی اندازے کے، معلوم ہوتا ہے اور طویل عرصہ اسی طرح رہنے پر بچے کی صورتحال غیرمحفوظ بن جاتی ہے (Kirkengen 2008) ۔

Molde فیملی کاؤنسلنگ سنٹر (familievernkontoret) کے کیس دیکھنے سے معلوم ہوتا ہے کہ جن والدین کو غصے کا مسئلہ تھا، ان میں سے 85٪ نے علاج کی پیشکش قبول کرنے کی خواہش کی۔ ماؤں اور باپوں کی برابر تعداد نے مدد لینے کی خواہش کی۔ باقی 15٪ نے اپنے غصے کیلئے دوسروں کو قصوروار ٹھہرایا اور وہ بات چیت کیلئے نہیں آنا چاہتے تھے۔

غصے پر قابو کیلئے Cognitive تھراپی کا اثر معلوم کرنے والے تحقیقی مطالعات سے پتہ چلتا ہے کہ 4 میں سے 3 افراد کو علاج کے بعد غصے پر بہتر قابو حاصل ہو جاتا ہے (Beck اورFernandez ، 1998) ۔

littsint.no ویب سائیٹ، ای بک اور littsint ایپ کا مقصد نفسیاتی علم اور ایک ایسے طریقے کو عام کرنا ہے کہ والدین بچوں کیلئے زیادہ محفوظ اور زیادہ قابل اندازہ زںدگی مہیا کرنے کی خاطر اپنی مدد آپ کر سکیں۔ مزید یہ کہ والدین کو یہ معلومات ملیں کہ اگر وہ پیشہ ورانہ مدد لینا چاہتے ہوں تو یہ مدد کیسے حاصل کی جا سکتی ہے۔

Steinar Sunde
سپیشلسٹ سائیکالوجسٹ اور Cognitive کاؤنسلر

 

حوالہ جات کی فہرست

Beck, A. T. (1999) Prisoner of hate, the cognitive basis of anger, hostility, and violence. New York: Harper Collins Publishers.Beck, J, S. (2006) Kognitiv terapi. Teori, udøvelse og refleksjon. Akademisk forlag.

Beck, R. & Fernadez, E. (1998). Cognitiv-behavioral therapy, in the threatment of anger: A meta-analysis. Cognitive Therapy and Research, 22, 63-74.

Berge, T. & Repål, A. (2017). Den indre samtalen. Kognitiv terapi i praksis. Oslo: Gyldendal Akademisk.

Brandtzæg. I, Smith. L, Torsteinson. S (2011) Mikroseparasjoner, tilknytning og behandling. Fagbokforlaget

Brandtzæg. I, Torsteinson. S, Øiestad. G (2013) Se barnet innenfra. Hvordan jobbe med tilknytning I barnehagen. Kommuneforlaget.

Dahl, K. Snersrud, K. (2007) Barn som vitne til vold i familien. En behandlingsmanual. Familievernkontoret i Sør-Trøndelag.

Den Norsk Legeforening. (2010) Statusrapport: Da lykkeliten kom til verden. – Om belastninger i tidlige livsfaser.

Ellis, A. (1962). Reason and emotion in psychotherapy. New York: Lyle Stuart.

Filetti, V. J.(2009).The relationship of adverse childhood experience to adulth health: turning gold into lead. Z. Psychosom Med Psychother 2009; 48: 359-69.

Haaland, T. Clausen, S. E. Schei, B. (2005) Vold I parforhold. Ulike perspektiver. NIBR-rapport 3.

Heltne, U. & Steinsvåg, P. Ø. (2010) Avsluttende prosjektrapport. Barn som lever med vold i familien. Alternativ til vold og Senter for Krisepsykologi.

Isdahl, P. (2000). Meningen med volden. Oslo: kommuneforlaget.

Jarwson, S. & Haugan, G. S. (2016). Vold og aggresjon: et kurs i sinnemestring. I Berge, T. & Repål, A. (Red.), Handbok i kognitiv terapi. Oslo: Gyldendal Akademisk.

Kirkengen, (2008). Hvorfor krenkede barn blir syke voksne. Universitetsforlaget.

Middelborg, J. Lilledal, G. Tindberg, J. W. Solevåg, A. Lang, N. (2007) Tryggere barndom. Parterapi – en nyttig tilnærming for barn som lever med vold i familien. Fokus på familien, 35: 292-311.

Mossige, S. Stefansen, K (red) (2007). Vold og overgrep mot barn og unge. Norsk institutt for forskning om oppvekst, velferd og aldring. (NOVA) Rapport 20/07.

Mossige, S. Stefansen, K (red) (2016). Vold og overgrep mot barn og unge. Omfang og utviklingstrekk fra 2007-2015. Norsk institutt for forskning om oppvekst, velferd og aldring. (NOVA) Rapport 20/16.

Raknes, S. (2010a). Psykologisk førstehjelp. Barn. Gyldendal Akademiske.

Raknes, S. (2010b). Psykologisk førstehjelp. Ungdom. Oslo. Gyldendal Akademiske.

Raundalen, M. Isdal, P. (2004) Nyhetsbrev til fagpersoner som møter barn som lever med vold i familien. Bulletin nr 1 i prosjektet ”Barn som lever med vold i familien”.

Berge, T. og Repål, A. mfl (2016). Behandlingsalliansen i kognitiv terapi. I: T. Berge, & A. Repål, (red.): Håndbok i kognitiv terapi. Oslo: Gyldendal Akademiske.

Råkil, M. (2002) Menns vold mot kvinner – behandlingserfaringer og kunnskapsstatus. Oslo: Universitetsforlaget.

Sunde, S. (2012) Undervisningsfilm: ABC i sinnemestring, En kognitiv modell i terapeutisk arbeid med foreldre. kognitiv.no

Sunde, S. (2013) Undervisningsfilm: ABC i sinnemestring. En kognitiv modell i terapeutisk arbeid med foreldre, påfølgende timer. kognitiv.no

Sunde, S. (2014) ABC i sinnemestring for foreldre. Tidsskrift for Kognitiv terapi. Nr 2, 2014.

Sunde, S. (2016) Podcast radio. Sinnemestring med psykologspesialist Steinar Sunde. Foreldrerådet Rubicon radio/TV.

Sunde, S. (2017) Teknikker for å mestre sinne. Tidsskrift for helsesøstre. Nr 2, 2017.

Sunde, S. (2017) Opplever du å bli mer sint på barna enn du ønsker? Hvordan avdekke og behandle hverdagssinne/volden i familier? Utposten, blad for allmenn- og samfunnsmedisin. Nr 5, 2017.

Vatnar, S. K. B. (2000): Familievold og familievern. Presentasjon og drøfting av en kartleggingsundersøkelse ved familievernkontorene i Norge. Fokus på familien, 3: 169-182.

Vatnar, S. K. B. (2003): Evalueringsrapport for prosjektet ”Vitne til vold” tiltak 2 i regjeringens handlingsplan ”vold mot kvinner” 2001 – 2003.

Wilhelmsen, I. (2016). Sjef i eget liv – en bok om kognitiv terapi. Hertervig Forlag.